You are currently viewing سورہ اخلاص، جسے خدا کی وحدانیت کا اعلان بھی کہا جاتا ہے،
surah ikhlas, aisa khuda ki wahdaniyat ka elaan bhi kaha jata hai ,

سورہ اخلاص، جسے خدا کی وحدانیت کا اعلان بھی کہا جاتا ہے،

  • Post author:
  • Post category:Quran Pak

سورہ اخلاص، جسے خدا کی وحدانیت کا اعلان بھی کہا جاتا ہے، قرآن کا 112 واں باب ہے۔ یہ ایک مختصر سورت ہے، جو صرف چار آیات پر مشتمل ہے، لیکن یہ اسلام کی سب سے اہم اور محبوب سورتوں میں سے ایک ہے۔

سورہ کا آغاز اس حکم سے ہوتا ہے کہ “کہو کہ وہ اللہ ہے، [جو] ایک ہے۔” یہ بیان خدا کی وحدانیت کی تصدیق کرتا ہے اور خدا کے ساتھ کثرتیت یا شراکت کے کسی تصور کو مسترد کرتا ہے۔ سورہ آگے کہتی ہے کہ خدا “خود کفیل” ہے، یعنی وہ کسی چیز یا کسی کا محتاج نہیں ہے۔ وہ ہر چیز کا خالق اور پالنے والا ہے اور اس کے برابر کوئی نہیں۔

سورہ اخلاص خدا کی وحدانیت اور اس کی مطلق حاکمیت کی ایک طاقتور یاد دہانی ہے۔ یہ مسلمانوں کے لیے بہت سکون اور طاقت کا ذریعہ ہے، اور یہ اکثر خدا کی بخشش اور رحمت کے حصول کے لیے پڑھا جاتا ہے۔

سورہ اخلاص کی ہر آیت کی مختصر تشریح یہ ہے:

آیت 1: “کہو، ‘وہ اللہ ہے، [جو] ایک ہے۔” یہ آیت خدا کی وحدانیت کی تصدیق کرتی ہے۔ خدا تثلیث نہیں ہے، اور نہ ہی وہ دیوتاؤں کے پینتھیون کا حصہ ہے۔ وہ واحد خدا ہے اور وہ منفرد ہے۔
آیت 2: “اللہ، ابدی پناہ گاہ۔” یہ آیت خدا کو ہر چیز کا پالنے والا بیان کرتی ہے۔ وہ وہی ہے جو ہماری جسمانی اور روحانی دونوں ضروریات کو پورا کرتا ہے۔
آیت 3: “وہ نہ تو پیدا ہوتا ہے اور نہ ہی پیدا ہوتا ہے۔” یہ آیت اس تصور کو رد کرتی ہے کہ خدا کے بچے ہیں۔ خدا ہر چیز کا خالق ہے، اور وہ انسانوں کی طرح حدود کا تابع نہیں ہے۔
آیت 4: “اور اس کا کوئی ہمسر نہیں ہے۔” یہ آیت خدا کی مطلق وحدانیت کی تصدیق کرتی ہے۔ اس جیسا کوئی نہیں اور اس کا کوئی شریک یا ہمسر نہیں۔
سورہ اخلاص خدا کی وحدانیت کی ایک خوبصورت اور طاقتور یاد دہانی ہے۔ یہ مسلمانوں کے لیے بہت سکون اور طاقت کا ذریعہ ہے، اور یہ اکثر خدا کی بخشش اور رحمت کے حصول کے لیے پڑھا جاتا ہے۔