You are currently viewing الرحیم اسلام میں اللہ کے 99 ناموں میں سے ایک ہے
raheem islam mein Allah ke 99 naam mein se aik hai

الرحیم اسلام میں اللہ کے 99 ناموں میں سے ایک ہے

  • Post author:
  • Post category:Islam

الرحیم اسلام میں اللہ کے 99 ناموں میں سے ایک ہے۔ یہ عربی لفظ “رحمہ” سے نکلا ہے، جس کا مطلب ہے رحم۔ الرحیم “رحمہ” کی اعلیٰ شکل ہے، یعنی یہ انتہائی رحم، مہربانی اور ہمدردی کی نمائندگی کرتا ہے۔ اسلامی الہیات میں، رحمت اللہ کی اہم ترین صفات میں سے ایک ہے، اور الرحیم ان ناموں میں سے ایک ہے جو اس صفت پر زور دیتا ہے۔

الرحیم کا ذکر اکثر اللہ کے ایک اور نام کے ساتھ کیا جاتا ہے، الرحمٰن۔ جب کہ الرحمٰن اللہ کی رحمت کی آفاقیت اور کثرت پر زور دیتا ہے، الرحیم اس کے تسلسل اور خاصیت پر زور دیتا ہے۔ الرحیم کی رحمت مسلسل ہے، کبھی نہ ختم ہونے والی، اور مخصوص افراد کی طرف ہے جو اس کے مستحق ہیں۔ کہا جاتا ہے کہ الرحیم کی رحمت ہر چیز اور ہر ایک کو محیط ہے، لیکن یہ مختلف لوگوں پر ان کے حالات اور ایمان کی سطح کے لحاظ سے مختلف طریقوں سے ظاہر ہوتی ہے۔
قرآن نے الرحیم کا متعدد بار ذکر کیا ہے، اللہ کی رحمت اور رہنمائی کی تلاش کی اہمیت پر زور دیا ہے۔ مثال کے طور پر، سورۃ الفاتحہ، قرآن مجید کے پہلے باب میں، اللہ کو “الرحمن، الرحیم” کے طور پر بیان کیا گیا ہے، جس کا مطلب ہے “بہت مہربان، رحم کرنے والا”۔ یہ جملہ پورے قرآن میں اللہ کی رحمت اور اس کی مخلوق پر مہربانی کی یاد دہانی کے طور پر دہرایا گیا ہے۔
اس کے علاوہ، قرآن میں اللہ کی رحمت کے مخصوص اعمال کا بھی ذکر ہے جو الرحیم سے منسوب ہیں۔ مثال کے طور پر سورۃ الانعام کی آیت نمبر 54 میں ارشاد ہوتا ہے کہ ’’اور جب تمہارے پاس وہ لوگ آئیں جو ہماری آیات پر ایمان رکھتے ہیں تو کہتے ہیں کہ تم پر سلامتی ہو، تمہارے رب نے اپنے اوپر رحمت کا فیصلہ کر لیا ہے کہ تم میں سے کوئی جو نادانی سے غلط کام کرے پھر اس کے بعد توبہ کرے اور اپنی اصلاح کرلے، بیشک وہ بخشنے والا مہربان ہے۔” یہ آیت اس بات پر زور دیتی ہے کہ اللہ تعالیٰ کی رحمت نہ صرف مسلسل ہے، بلکہ یہ ان لوگوں کے لیے بخشنے والی اور دستیاب بھی ہے جو سچے دل سے اس کے طالب ہیں۔
مزید برآں، نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے الرحیم کا نام پکار کر اللہ کی رحمت حاصل کرنے کی اہمیت کے بارے میں بھی بتایا۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”بے شک اللہ تعالیٰ کی رحمت کے سو حصے ہیں، جن میں سے ایک حصہ اس نے جنوں، انسانوں، جانوروں اور حشرات الارض پر نازل کیا ہے، جس کے ذریعے سے وہ ایک دوسرے پر شفقت اور مہربانی کرتے ہیں، اور اس کے ذریعے سے جنگلی جانور بھی۔ اپنی اولاد پر مہربان ہیں اور اللہ تعالیٰ نے رحمت کے ننانوے حصے واپس رکھے ہیں جن سے قیامت کے دن اپنے بندوں پر رحم کیا جائے گا۔ (صحیح مسلم)
آخر میں، الرحیم اسلام میں اللہ کے سب سے اہم ناموں میں سے ایک ہے، جو اس کی مخلوق پر اس کی مسلسل اور نہ ختم ہونے والی رحمت کی نمائندگی کرتا ہے۔ یہ مسلمانوں کے لیے ایک یاد دہانی ہے کہ وہ اپنی زندگی کے تمام پہلوؤں میں اللہ کی رحمت اور رہنمائی حاصل کریں۔ رحمت کی صفت اللہ کے کردار کا ایک لازمی پہلو ہے، اور یہ الرحیم کے نام کو پکارنے سے ہی مومنین اللہ کی لامحدود رحمت اور بخشش حاصل کرنے کی امید کر سکتے ہیں۔