You are currently viewing ال احد اللہ کا نام قرآن میں صرف ایک بار آیا ہے،
al lahd allah ka name quran mein sirf aik baar aaya ha

ال احد اللہ کا نام قرآن میں صرف ایک بار آیا ہے،

  • Post author:
  • Post category:Islam

، اللہ الاحد کا نام قرآن میں صرف ایک بار آیا ہے، سورہ اخلاص کی پہلی آیت (112:1) میں:قُلْ هُوَ اللَّهُ أَحَدٌ،قل ھو اللہ احد،کہو، “وہ اللہ ہے، [جو] ایک ہے۔

، اللہ الاحد کا نام قرآن میں صرف ایک بار آیا ہے، سورہ اخلاص کی پہلی آیت (112:1) میں:قُلْ هُوَ اللَّهُ أَحَدٌ،قل ھو اللہ احد،کہو، “وہ اللہ ہے، [جو] ایک ہے۔عربی میں لفظ احد کا مطلب ہے “ایک،” “منفرد” یا “ناقابل تقسیم۔” لہذا، الاحد کا مطلب ہے “ایک،” “منفرد،” یا “ناقابل تقسیم۔”اللہ کا یہ نام اس کی مکمل وحدانیت پر زور دیتا ہے۔ وہ واحد خدا ہے اور اس جیسا کوئی دوسرا نہیں ہے۔ وہ حصوں میں تقسیم نہیں ہے، اور وہ اپنی الوہیت کو کسی یا کسی چیز کے ساتھ شریک نہیں کرتا ہے۔
نام الاحد بھی مخلوق کی وحدانیت کی یاد دہانی ہے۔ تمام کائنات اللہ کی طرف سے بنائی گئی ہے، اور یہ سب اس کی مرضی کے تابع ہے۔ اس کے سوا کوئی طاقت اور اختیار نہیں ہے۔الاحد نام مسلمانوں کے لیے بہت سکون اور طاقت کا باعث ہے۔ یہ انہیں یاد دلاتا ہے کہ وہ ایک ایسے خدا کی پرستش کرتے ہیں جو قادر مطلق، سب کچھ جاننے والا اور سب سے محبت کرنے والا ہے۔ وہ اس پر بھروسہ کر سکتے ہیں کہ وہ زندگی میں ان کی رہنمائی کرے اور انہیں نقصان سے بچائے۔
اللہ کا نام یاد کرنے کے چند فائدے یہ ہیں:اس سے اللہ کی وحدانیت پر ہمارا ایمان بڑھتا ہے۔یہ ہمیں اس پر توجہ مرکوز کرنے میں مدد کرتا ہے جو واقعی ہماری عبادت کے لائق ہے۔یہ ہمیں مشکل کے وقت سکون اور راحت دیتا ہے۔یہ ہمیں یاد دلاتا ہے کہ ہم کائنات میں اکیلے نہیں ہیں، اور یہ کہ ایک خدا ہے جو ہمیں پیار کرتا ہے اور ہماری دیکھ بھال کرتا ہے۔