المالک”ملک” سے ماخوذ ہے جس کا مطلب ہے “بادشاہ” یا “حکمران

  • Post author:
  • Post category:Islam

المالک اسلام میں اللہ کے 99 ناموں میں سے ایک ہے۔ یہ عربی لفظ “ملک” سے ماخوذ ہے جس کا مطلب ہے “بادشاہ” یا “حکمران”۔ الملک اللہ کی حتمی حاکمیت اور کائنات کی تمام چیزوں پر کنٹرول کی نمائندگی کرتا ہے، ظاہر اور پوشیدہ دونوں۔ یہ تمام مخلوقات کے اعلیٰ حاکم اور مالک کے طور پر اللہ کی قدرت اور اختیار پر زور دیتا ہے۔

قرآن نے اللہ کی حاکمیت کو تسلیم کرنے اور اس کی مرضی کے تابع ہونے کی اہمیت پر زور دیتے ہوئے متعدد بار المالک کا ذکر کیا ہے۔ مثال کے طور پر، قرآن کے پہلے باب سورۃ الفاتحہ میں، اللہ کو “مالکی یاومدین” یعنی “قیامت کے دن کا مالک” کے طور پر بیان کیا گیا ہے۔ یہ جملہ مسلمانوں کو یاد دلاتا ہے کہ اللہ ہی حتمی فیصلہ کرنے والا اور حاکم ہے اور قیامت کے دن ان سے ان کے اعمال کا حساب لیا جائے گا۔اس کے علاوہ، قرآن نے اللہ کی حاکمیت کے مخصوص اعمال کا بھی ذکر کیا ہے جو المالک سے منسوب ہیں۔ مثال کے طور پر سورۃ الانعام کی آیت نمبر 18 میں ارشاد ہے کہ ’’اور وہ اپنے بندوں پر حاکم ہے اور وہ تم پر نگہبان بھیجتا ہے یہاں تک کہ جب تم میں سے کسی کو موت آتی ہے تو ہمارے رسول اسے پکڑ لیتے ہیں۔ [اپنے فرائض میں] کوتاہی نہ کرو۔” یہ آیت اس بات پر زور دیتی ہے کہ اللہ اپنی مخلوق پر مکمل کنٹرول رکھتا ہے، بشمول فرشتے جو انسانوں کے نگہبان کے طور پر کام کرتے ہیں۔مزید برآں، حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم نے المالک کا نام پکار کر اللہ کی حاکمیت کو پہچاننے کی اہمیت کے بارے میں بھی بتایا۔ فرمایا کہ اے اللہ بادشاہی کے مالک تو جسے چاہے بادشاہی دیتا ہے اور جس سے چاہتا ہے بادشاہی چھین لیتا ہے تو جسے چاہتا ہے عزت دیتا ہے اور جسے چاہتا ہے پست کرتا ہے، تیرے ہاتھ میں سب کچھ ہے۔ بے شک تو ہر چیز پر قادر ہے۔‘‘ (سورۃ آل عمران، آیت 26)
اسلامی الہیات میں، اللہ کی حاکمیت کو تسلیم کرنا اور اس کی مرضی کے تابع ہونا ایمان کا ایک لازمی پہلو ہے۔ مسلمانوں کا عقیدہ ہے کہ اللہ تمام مخلوقات کا حتمی حاکم اور مالک ہے، اور کائنات کی ہر چیز اس کے اختیار میں ہے۔ المالک کا نام لے کر، مسلمان اللہ کی قدرت اور اختیار کو تسلیم کرتے ہیں، اور اس کی رہنمائی اور حفاظت چاہتے ہیں۔آخر میں، الملک اسلام میں اللہ کے سب سے اہم ناموں میں سے ایک ہے، جو کائنات کی تمام چیزوں پر اس کی حتمی حاکمیت اور کنٹرول کی نمائندگی کرتا ہے۔ یہ مسلمانوں کے لیے اللہ کی مرضی کے سامنے سر تسلیم خم کرنے اور اس کی طاقت اور اختیار کو تسلیم کرنے کی یاد دہانی ہے۔ حاکمیت کی صفت اللہ کے کردار کا ایک لازمی پہلو ہے، اور یہ المالک کا نام لینے سے ہی مومنین اللہ کی ہدایت اور حفاظت حاصل کرنے کی امید کر سکتے ہیں۔