You are currently viewing سورۃ النباء قرآن مجید کی 78ویں سورت ہے۔ یہ ایک مکی سورہ ہے
surah al naba quran Majeed ki 78 win surat hai. yeh aik muki surah hai

سورۃ النباء قرآن مجید کی 78ویں سورت ہے۔ یہ ایک مکی سورہ ہے

  • Post author:
  • Post category:Quran Pak

سورۃ النباء قرآن مجید کی 78ویں سورت ہے۔ یہ ایک مکی سورہ ہے، یعنی یہ نبی محمد صلی اللہ علیہ وسلم پر مدینہ ہجرت سے پہلے نازل ہوئی تھی۔ یہ سورہ 40 آیات پر مشتمل ہے اور اس میں مختلف موضوعات پر بحث کی گئی ہے، جن میں کائنات کی تخلیق، مردوں کا جی اٹھنا، قیامت کا دن اور آخرت کے انعامات اور سزائیں شامل ہیں۔

سورہ ایک سوال کے ساتھ شروع ہوتی ہے: “کیا چیز آپ کو عظیم خبر کا احساس دلائے گی؟” (آیت 1)۔ اس سوال کا جواب پھر آیات کے ایک سلسلے سے دیا جاتا ہے جو کائنات میں اللہ کی نشانیوں کو بیان کرتی ہیں، جیسے کہ زمین، پہاڑ، سمندر اور سورج اور چاند کی تخلیق۔ یہ نشانیاں اللہ کی قدرت اور عظمت کی یاد دہانی ہیں، اور انہیں ہمیں زندگی میں اپنے مقصد اور اپنی آخری منزل پر غور کرنے کی رہنمائی کرنی چاہیے۔اس کے بعد سورہ مردوں کے جی اٹھنے اور قیامت کے دن پر گفتگو کرتی ہے۔ اس دن تمام لوگ اپنی قبروں سے اٹھائے جائیں گے اور اللہ کے حضور ان کے اعمال کا فیصلہ کرنے کے لیے جمع کیے جائیں گے۔ نیکی کرنے والوں کو جنت اور برائی کرنے والوں کو جہنم میں سزا دی جائے گی۔سورہ کا اختتام کافروں کے لیے تنبیہ پر ہوتا ہے۔ انہیں بتایا جاتا ہے کہ وہ قیامت کے دن اپنے کفر پر پشیمان ہوں گے، جب ان کے طریقے بدلنے میں بہت دیر ہو جائے گی۔ انہیں یہ بھی بتایا گیا ہے کہ انہیں ہمیشہ کے لیے جہنم میں سزا دی جائے گی۔سورہ نبا اللہ پر ایمان کی اہمیت اور اس زندگی میں ہمارے اعمال کے نتائج کی ایک طاقتور یاددہانی ہے۔ یہ ایک ایسی سورت ہے جسے تمام مسلمانوں کو پڑھنا اور اس پر غور کرنا چاہیے، چاہے ان کی سمجھ کی سطح کچھ بھی ہو۔سورہ نبا کے چند اہم نکات یہ ہیں:کائنات اللہ کی قدرت اور عظمت کی نشانی ہے۔ہم سب اپنی قبروں سے اٹھائے جائیں گے اور ہمارے اعمال کا فیصلہ کیا جائے گا۔نیکی کرنے والوں کو جنت اور برائی کرنے والوں کو جہنم میں سزا دی جائے گی۔ہمیں اپنی زندگی اسلام کی تعلیمات کے مطابق گزارنی چاہیے، تاکہ ہم آخرت میں عذاب سے بچ سکیں۔ہمیں اس دنیا میں اپنے وقت کو کبھی بھی معمولی نہیں سمجھنا چاہیے، کیونکہ یہ ایک لمحہ فکریہ ہے۔
!