You are currently viewing سورۃ الفیل (عربی: الفيل، “ہاتھی”) قرآن کا 105 واں باب (سورہ) ہے۔
surah al-fil ( arabic : al-fil," hathi" ) quran kay 105 wahn baab ( surah ) hai .

سورۃ الفیل (عربی: الفيل، “ہاتھی”) قرآن کا 105 واں باب (سورہ) ہے۔

  • Post author:
  • Post category:Quran Pak

سورۃ الفیل (عربی: الفيل، “ہاتھی”) قرآن کا 105 واں باب (سورہ) ہے۔ یہ ایک مکی سورہ ہے جو 5 آیات پر مشتمل ہے۔ سورہ سوالیہ شکل میں لکھی گئی ہے۔

اس سورت میں یمن کے حبشی گورنر ابرہہ کی فوج کی کہانی بیان کی گئی ہے جس نے خانہ کعبہ کو تباہ کرنے کی کوشش میں ہاتھیوں کے لشکر کے ساتھ مکہ پر حملہ کیا۔ تاہم، فوج کو معجزانہ طور پر پرندوں کے جھنڈ سے شکست ہوئی جس نے ان پر پتھروں کی بارش کر دی، اور انہیں “بکھرے ہوئے پتوں کی طرح” چھوڑ دیا (قرآن 105:5)۔

سورہ کئی اسباق سکھاتی ہے، بشمول:

اللہ کی قدرت اور اس کے پیروکاروں کی حفاظت کرنے کی صلاحیت۔
فوجی طاقت یا دوسری دنیاوی قوتوں پر انحصار کرنے کی فضولیت۔
اللہ پر ایمان اور توکل کی اہمیت۔
یہ بھی خیال کیا جاتا ہے کہ اس سورت میں حفاظتی فوائد ہیں، اور اکثر اس مقصد کے لیے اس کی تلاوت کی جاتی ہے۔

سورۃ الفل کی ہر آیت کی مختصر تشریح یہ ہے:

آیت 1: “کیا تم نے نہیں دیکھا کہ تمہارے رب نے ہاتھی کے مالکوں کے ساتھ کیا سلوک کیا؟”
یہ آیت حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم سے ابرہہ کے لشکر کی کہانی پر غور کرنے کو کہتی ہے۔

آیت 2: “کیا اس نے ان کی تدبیر کو ناکام نہیں کیا؟”
یہ آیت ہمیں بتاتی ہے کہ اللہ نے ابرہہ اور اس کے لشکر کے منصوبوں کو ناکام بنا دیا۔

آیت 3: “اور ان پر پرندوں کے جھنڈ بھیجے گئے”
یہ آیت بتاتی ہے کہ اللہ تعالیٰ نے ابرہہ کے لشکر کے خلاف پرندوں کے جھنڈ بھیجے۔

آیت 4: “جس نے ان پر پکی ہوئی مٹی کے پتھر گرائے،”
یہ آیت بتاتی ہے کہ پرندوں نے ابرہہ کے لشکر پر پتھروں کی بارش کی جو پکی ہوئی مٹی سے بنے تھے۔

آیت 5: “ان کو چبائے ہوئے بھوسے کی طرح چھوڑنا؟”
یہ آیت ہمیں بتاتی ہے کہ ابرہہ کی فوج کو شکست ہوئی اور “چبائے ہوئے بھوسے کی طرح” چھوڑ دیا گیا۔

سورۃ الفیل ایک مختصر لیکن طاقتور سورت ہے جو ہمیں اللہ کی قدرت اور اس کے پیروکاروں کے لیے اس کی حفاظت کے بارے میں قیمتی سبق سکھاتی ہے۔ یہ ایک یاد دہانی ہے کہ ہمیں ہمیشہ اللہ پر بھروسہ رکھنا چاہیے اور اپنی طاقت یا صلاحیتوں پر بھروسہ نہیں کرنا چاہیے۔