You are currently viewing سورہ سجدہ جسے سورہ الف لام میم سجدہ بھی کہا جاتا ہے، قرآن کا 32 واں باب ہے
surah sajda jisay surah alif laam maim sajda bhi kaha jata hai, quran ka 32 wahn baab hai

سورہ سجدہ جسے سورہ الف لام میم سجدہ بھی کہا جاتا ہے، قرآن کا 32 واں باب ہے

  • Post author:
  • Post category:Quran Pak

سورہ سجدہ جسے سورہ الف لام میم سجدہ بھی کہا جاتا ہے، قرآن کا 32 واں باب ہے۔ یہ 30 آیات پر مشتمل ہے اور مکہ مکرمہ میں نازل ہوئی ہے۔ “سجدہ” نام سے مراد وہ سجدہ ہے جس کا ذکر آیت 15 میں کیا گیا ہے،

سورہ سجدہ جسے سورہ الف لام میم سجدہ بھی کہا جاتا ہے، قرآن کا 32 واں باب ہے۔ یہ 30 آیات پر مشتمل ہے اور مکہ مکرمہ میں نازل ہوئی ہے۔ “سجدہ” نام سے مراد وہ سجدہ ہے جس کا ذکر آیت 15 میں کیا گیا ہے، جہاں مومنوں کو اللہ کا شکر ادا کرنے اور سر تسلیم خم کرنے کی ترغیب دی گئی ہے۔
اس سورت میں اللہ کی قدرت اور عظمت، کافروں کی طرف سے پیغام کا رد، اور آخرت میں ان کو جن نتائج کا سامنا کرنا پڑے گا، سمیت متعدد موضوعات پر روشنی ڈالی گئی ہے۔ اس میں اللہ کی مخلوق کی نشانیوں پر غور کرنے، اس کی بخشش مانگنے اور اس کی طرف مخلصانہ عبادت کرنے کی اہمیت پر زور دیا گیا ہے۔
سورہ کا آغاز قرآن کو اللہ کی طرف سے نازل کردہ اور بنی نوع انسان کے لیے ہدایت کے طور پر اجاگر کرنے سے ہوتا ہے۔ یہ اس بات پر زور دیتا ہے کہ غیب کا علم صرف اللہ کے پاس ہے اور تمام معاملات کا فیصلہ وہی کرے گا۔ اس میں اللہ کے وجود اور قدرت کی نشانیوں پر زور دیتے ہوئے زمین و آسمان کی تخلیق پر بھی بحث کی گئی ہے۔
اس کے بعد سورہ ماضی کی قوموں کی مثالیں پیش کرتی ہے جنہوں نے اپنے پیغمبروں کے پیغام کو رد کیا اور ان کے نتائج کا سامنا کیا۔ یہ کافروں کے لیے ایک تنبیہ اور اسلام کے پیغام پر عمل کرنے کی اہمیت کی یاد دہانی کا کام کرتا ہے۔
سورہ سجدہ کی آیت 15 خاص طور پر اہم ہے، کیونکہ یہ سجدہ کے عمل کو عبادت کی ایک شکل کے طور پر اجاگر کرتی ہے۔ اس میں کہا گیا ہے کہ مومن اللہ کے حضور سجدہ ریز ہوتے ہیں، محبت اور اس کی نعمتوں کے شکر گزار ہوتے ہیں۔ یہ آیت اکثر روزانہ کی نمازوں میں سجدہ (سجدہ) کے دوران پڑھی جاتی ہے، جو مسلمانوں کو اللہ کے سامنے عاجزی کرنے کی اہمیت کی یاد دلاتی ہے۔
مجموعی طور پر، سورہ سجدہ مومنوں کو اللہ کے وجود اور قدرت کی نشانیوں کو پہچاننے، اس کی بخشش اور رہنمائی حاصل کرنے اور خلوص نیت سے اس کی عبادت کرنے کی ترغیب دیتی ہے۔ یہ اسلام کے پیغام کو رد کرنے والوں کو درپیش نتائج کی یاد دہانی کے طور پر کام کرتا ہے اور اللہ کے سامنے عاجزی اور سر تسلیم خم کرنے کی اہمیت پر زور دیتا ہے۔