You are currently viewing سورہ الد دخان قرآن مجید کی 44 ویں سورت ہے جس میں 59 آیات اورتین رقو ع ہیں
sourate ad dukhan quran Majeed ki 44 win hey surah jis mein 59 aayat aur 3 ruku hain .

سورہ الد دخان قرآن مجید کی 44 ویں سورت ہے جس میں 59 آیات اورتین رقو ع ہیں

  • Post author:
  • Post category:Islam

نام: سورہ کا نام لفظ “دخان” کے نام پر رکھا گیا ہے جس کا مطلب ہے “دھواں”۔ اس کا تذکرہ آیت نمبر 10 میں ہے، جہاں کہا گیا ہے کہ اللہ تعالیٰ قیامت کے دن دھواں نازل کرے گا جو لوگوں کو لپیٹ لے گا۔
نزول: سورۃ الدخان مکہ میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے ابتدائی دور میں نازل ہوئی تھی۔

موضوعات: سورہ میں متعدد موضوعات پر بحث کی گئی ہے، بشمول:قرآن مجید کافروں کے لیے ایک تنبیہ ہے۔قیامت کے دن کافروں کا عذاباللہ کی قدرت اور حاکمیتآسمانوں اور زمین کی تخلیقکائنات میں اللہ کی نشانیاں
اہمیت: سورہ دخان قیامت کے دن اور کافروں کے لیے آنے والے عذاب کی ایک طاقتور یاد دہانی ہے۔ یہ ہمیں اللہ کی قدرت اور حاکمیت، اور کائنات میں اس کی تخلیق کی نشانیوں کے بارے میں بھی سکھاتا ہے۔سورہ دخان کی چند اہم آیات یہ ہیں:آیت 1: “ہا میم۔ واضح کتاب کی قسم!”آیت 10: “اور ہم آسمان سے ایک دھواں نازل کریں گے جو لوگوں پر چھا جائے گا۔”آیت 11: “ان کو ڈھانپنا، یہ بڑی تکلیف کا عذاب ہے۔”آیت 25: “ہم نے آسمان و زمین اور ان کے درمیان کی ہر چیز کو کھیل کود کے لیے نہیں بنایا۔”آیت 40: “اس دن ہر ایک کو اس کے کیے کا پورا پورا بدلہ دیا جائے گا۔”آیت 56: “جو لوگ ایمان لائے اور نیک عمل کیے وہ نعمتوں کے باغوں میں ہوں گے۔”سورہ دخان ایک خوبصورت اور طاقتور سورت ہے جو ہمیں قیامت کے دن، اللہ کی قدرت اور کائنات میں اس کی تخلیق کی نشانیوں کے بارے میں سکھاتی ہے۔ یہ ہمارے لیے اللہ پر ایمان لانے اور اس کے احکام کے مطابق زندگی گزارنے کی یاددہانی ہے۔

مجھے امید ہے اس سے مدد ملے گی!