You are currently viewing اسلام میں امانت داری کی بہت فضیلت بیان کی گئی ہے
islam mein amanat dari ki bohat fazilat bayan ki gayi hai

اسلام میں امانت داری کی بہت فضیلت بیان کی گئی ہے

  • Post author:
  • Post category:Ahadees

اسلام میں امانت سے مراد امانت کا تصور ہے۔ یہ ایک مقدس فریضہ ہے جسے مسلمانوں کو اپنی ذاتی اور پیشہ ورانہ زندگیوں میں نبھانا ہے۔ امانت کی تعریف کسی ایسی ذمہ داری کے طور پر کی جا سکتی ہے جو کسی کو سونپی گئی ہو، چاہے وہ کوئی جسمانی چیز ہو، معلومات کا ٹکڑا ہو یا کوئی وعدہ ہو۔

قرآن اور سنت رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم امانت کی اہمیت پر زور دیتے ہیں۔ قرآن مجید میں اللہ سبحانہ وتعالیٰ کا ارشاد ہے:
’’بے شک اللہ تمہیں حکم دیتا ہے کہ امانتیں ان کے سپرد کرو اور جب لوگوں کے درمیان فیصلہ کرو تو عدل کے ساتھ فیصلہ کرو۔‘‘ (قرآن 4:58)
سنت میں نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:”جس نے کسی کی امانت میں خیانت کی اللہ قیامت کے دن اس کی خیانت کرے گا۔” (صحیح بخاری)امانت کی بہت سی قسمیں ہیں جو مسلمانوں کو سونپی جا سکتی ہیں۔ کچھ عام مثالوں میں شامل ہیں:جسمانی اشیاء: اس میں کار سے لے کر گھر تک زیورات کے ٹکڑے تک کچھ بھی شامل ہو سکتا ہے۔معلومات: اس میں خفیہ کاروباری معلومات سے لے کر ذاتی راز تک کچھ بھی شامل ہو سکتا ہے۔وعدے: اس میں کسی کی مدد کرنے کے وعدے سے لے کر شریک حیات کے وفادار رہنے کے وعدے تک کچھ بھی شامل ہو سکتا ہے۔یہ نوٹ کرنا ضروری ہے کہ امانت صرف ان مثالوں تک محدود نہیں ہے۔ کوئی بھی ذمہ داری جو کسی کے سپرد ہو اسے امانت سمجھا جاتا ہے۔مسلمانوں پر فرض ہے کہ وہ اپنی زندگی کے تمام پہلوؤں میں امانت کو برقرار رکھیں۔ اس کا مطلب ہے دوسروں کے ساتھ اپنے معاملات میں، ان کی ذاتی اور پیشہ ورانہ زندگیوں میں ایماندار اور قابل اعتماد ہونا۔ اس کا مطلب وعدوں کی پاسداری اور ذمہ داریوں کو پورا کرنا بھی ہے۔امانت کی خلاف ورزی کرنے والوں سے قیامت کے دن ان کے اعمال کا حساب لیا جائے گا۔ اللہ سبحانہ وتعالیٰ کا ارشاد ہے:”اور جو شخص اللہ اور اس کے رسول سے خیانت کرے اور عہد کرنے کے بعد اس کے عہد کی خلاف ورزی کرے تو اس پر اللہ کی اور فرشتوں اور لوگوں کی سب کی لعنت ہے، وہ اس میں ہمیشہ رہے گا، سوائے ان لوگوں کے جو توبہ کر لیں اور اصلاح کریں۔ اور اللہ بخشنے والا مہربان ہے۔” (قرآن 24:21)
امانت کا تصور اسلامی اخلاقیات کا ایک اہم حصہ ہے۔ یہ مسلمانوں کو ان کے فرض کی یاد دلاتا ہے کہ وہ دوسروں کے ساتھ اپنے تمام معاملات میں دیانت دار اور قابل اعتماد رہیں۔