You are currently viewing سحری اور افطاری  کے فضائل
sehri aur aftaari ke fazail

سحری اور افطاری کے فضائل

  • Post author:
  • Post category:Islam

سحری (روزہ سے پہلے فجر کا کھانا) اور افطاری (روزہ توڑنے کے لیے کھانا) اسلام میں بہت اہمیت رکھتے ہیں، اور قرآن و حدیث (پیغمبر اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے اقوال و افعال) میں ان کے فضائل پر زور دیا گیا ہے۔ اگرچہ “سحری” اور “افطاری” کی مخصوص اصطلاحات کا قرآن میں واضح طور پر ذکر نہیں کیا گیا ہے، لیکن فجر سے پہلے کھانے اور افطار کرنے کے عمومی تصورات کی تائید قرآنی آیات سے ہوتی ہے۔ قرآن کی روشنی میں چند پہلو یہ ہیں

سحری (صبح سے پہلے کا کھانا):

 

قرآنی ترغیب: اگرچہ “سحری” کی اصطلاح کا ذکر نہیں کیا گیا ہے، لیکن قرآن درج ذیل آیت میں فجر سے پہلے کے کھانے کی ترغیب دیتا ہے:

“اور کھاؤ پیو یہاں تک کہ صبح کا سفید دھاگہ سیاہ دھاگے سے نمایاں ہو جائے پھر سورج غروب ہونے تک روزہ پورا کرو۔” (قرآن، 2:187)

یہ آیت نماز فجر کے شروع ہونے تک کھانے پینے کی اجازت پر دلالت کرتی ہے، روزے کی مدت کا آغاز ہے۔

افطاری (روزہ توڑنا):

نعمتوں کا شکر ادا کرنا: روزہ افطار کرنے کا عمل  اللہ کی خو شنو دی حا صل کر نےاور اللہ کی عطا کر دہ رزق اور نعمتوں کا شکر ادا کرنے سے وابستہ ہوتا ہے۔ قرآن تما م امت مسلما ءکو شکر کی تر غیب دیتا ہے اور شکرگزاری نعمتوں میں میں اضافےکا سبب بنتی ہے  اور نا شکری اللہ کی نا راضگی کا با عث بنتی ہے :

اور (یاد کرو) جب تمہارے رب نے اعلان کیا کہ اگر تم شکر کرو گے تو میں تمہیں اور زیادہ دوں گا اور اگر تم ناشکری کرو گے تو بیشک میرا عذاب بہت سخت ہے۔ ” (قرآن، 14:7)

دعا (دعا): افطار کا لمحہ ایک ایسا وقت سمجھا جاتا ہے جب دعا آسانی سے قبول ہوتی ہے۔ قرآن مومنوں کو دعائیں کرنے کی ترغیب دیتا ہے دعا مو من کا ہتھا ر ہے رسو ل اللہ نے تمام مسلمانو ں کو دعا کی تر غیب دی ہے :

“اور جب میرے بندے آپ سے میرے بارے میں سوال کریں تو میں قریب ہوں، میں دعا کرنے والے کی پکار کو قبول کرتا ہوں جب وہ مجھے پکارتا ہے۔” (قرآن، 2:186)

سخاوت اور خیرات: دوسروں کے ساتھ افطاری بانٹنے اور احسان کے کاموں میں مشغول ہونے کی قرآن میں بہت ذکر کیا گیا ہےصد قا ت و خیرات سے ما ل میں اضا فہ ہو تا ہے اور اللہ اُس ما ل کو دو گنا بڑھا دیتے ہیں

“اور وہ اس کی محبت کے باوجود مسکینوں، یتیموں اور قیدیوں کو کھانا کھلاتے ہیں اور کہتے ہیں کہ ہم تمہیں صرف اللہ کی رضا کے لیے کھلاتے ہیں، ہم تم سے اجر یا شکرگزاری نہیں چاہتے۔” (القرآن) ، 76:8-9)

خلاصہ یہ کہ اگرچہ قرآن میں “سحری” اور “افطاری” کی مخصوص اصطلاحات کا تذکرہ نہیں کیا جا سکتا ہے، لیکن فجر سے پہلے کھانے اور افطار کرنے کے تصورات کی تائید آیات شکر، دعا اور احسان کے اعمال پر زور دیتی ہے۔ سحری اور افطاری کا رواج اسلامی روایت میں گہرائی سے جڑا ہوا ہے اور اسے روحانی ترقی اور اللہ سے قربت کا ذریعہ سمجھا جاتا ہے۔

سحری (صبح سے پہلے کا کھانا) اور افطاری (روزہ افطار کرنے کا کھانا) کے فضائل کو نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی احادیث (اقوال و افعال) میں بڑے پیمانے پر اجاگر کیا گیا ہے۔ یہ چند احادیث ہیں جو سحری اور افطاری کی اہمیت پر زور دیتی ہیں:

  1. سحری کے فضائل:

صحیح بخاری و مسلم: رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ سحری کھاؤ کیونکہ اس میں برکت ہے۔ (صحیح بخاری، کتاب 30، حدیث 145)

صحیح مسلم: رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے یہ بھی فرمایا کہ ہمارے اور اہل کتاب (یہود و نصاریٰ) کے روزوں میں فرق سحری سے پہلے کا کھانا ہے۔ (صحیح مسلم، کتاب 6، حدیث 2411)

** ابوہریرہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”سحری میں برکت ہوتی ہے، لہٰذا تم میں سے کوئی ایک گھونٹ پانی پی لے تو بھی اسے نہ چھوڑے۔ کیونکہ اللہ رحمت بھیجتا ہے اور اس کے فرشتے سحری کھانے والوں کے لیے دعا کرتے ہیں۔ (مسند احمد، حدیث 11422)

  1. افطاری کے فضائل:

صحیح بخاری: رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ لوگ جب تک افطار میں جلدی کرتے رہیں گے راہ راست پر رہیں گے۔ (صحیح بخاری، کتاب 30، حدیث 183)

صحیح مسلم: انس بن مالک رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”جب کوئی شخص افطار کرے اور اس کے پاس کوئی دعا ہو تو اسے رد نہیں کیا جاتا“۔ (صحیح مسلم، کتاب 6، حدیث 2305)

** ابوہریرہ رضی اللہ عنہ بیان کرتے ہیں کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”لوگ ایسی مجلس میں نہیں بیٹھتے جس میں اللہ کا ذکر نہ کیا جائے اور اپنے نبی پر درود بھیجا نہ ہو۔ لیکن یہ ان کے لیے پریشانی کا باعث بن جاتا ہے، اگر وہ اس میں رحم نہ کریں تو وہ غم کا باعث بن جاتے ہیں۔” (جامع ترمذی، کتاب 48، حدیث 2676)

  1. افطاری کے دوران سخاوت اور خیرات:

صحیح بخاری و مسلم: رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”جس نے کسی روزہ دار کو افطار کے لیے کھانا کھلایا، تو اس کے لیے اس (روزہ دار) کے برابر ثواب ہے، بغیر اس کے کہ اس میں کوئی کمی نہ کی جائے گی۔ روزہ دار کا ثواب” (صحیح بخاری، کتاب 31، حدیث 171)

صحیح مسلم: رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”جس نے کسی روزہ دار کو افطار کرایا، اسے اس کے برابر ثواب ملے گا، سوائے اس کے کہ روزہ دار کے ثواب میں کوئی کمی نہیں کی جائے گی۔ ” (صحیح مسلم، کتاب 6، حدیث 2308)

یہ احادیث سحری اور افطاری کی فضیلت پر روشنی ڈالتی ہیں، رمضان کے مہینے میں ان عبادات سے منسلک برکتوں، رحمتوں اور روحانی انعامات پر زور دیتی ہیں

سحری (صبح سے پہلے کا کھانا) اور افطاری (افطاری) کے بارے میں نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کے طرز عمل ان مسلمانوں کے لیے قابل قدر رہنمائی فراہم کرتے ہیں جو آپ کی سنت پر عمل کرنا چاہتے ہیں۔ نبی صلی اللہ علیہ وسلم نے سحری اور افطاری کے چند طریقے یہ ہیں:

سحری (صبح سے پہلے کا کھانا):

جلدی جاگنا:

آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے سحری کے لیے جلدی اٹھنے کی تاکید فرمائی۔ فرمایا سحری کرو کیونکہ اس میں برکت ہے۔ (صحیح بخاری)

تاریخوں اور پانی سے شروع:

سحری کھجور اور پانی سے شروع کرنا سنت ہے۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا کہ سحری بابرکت ہے، لہٰذا اس سے غافل نہ ہو خواہ تم میں سے کوئی ایک گھونٹ پانی ہی پی لے، کیونکہ اللہ اور اس کے فرشتے سحری میں برکت دیتے ہیں۔ (احمد)

متوازن اور غذائیت سے بھرپور کھانا:

نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے سحری کے لیے متوازن غذا اور صحت بخش کھانے کی ترغیب دی ہے تاکہ روزے کے پورے دن میں توانائی حاصل ہو سکے۔

دعائیں اور دعائیں:

سحری کے دوران اور اطا ر کے آخری لمحو ں میں اللہ کے خضو ر بے پنا ہ دعا ئیں کر یں اور روزے کی حا لت میں اللہ کی عبا دت میں مشغول رہ کر اللہ کی خو شنودی حا صل کر یں

افطاری (روزہ توڑنا):

کھجور اور پانی سے روزہ افطار کرنا:

سول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کی  سنت پر عمل پیراکرتے ہوئے کھجور اور پانی سے افطار کرنا چا ہیے۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جب تم میں سے کسی کو روزے کی حالت میں کھانے کی دعوت دی جائے تو وہ کہے کہ میں روزے سے ہوں۔‘‘ (صحیح بخاری)

افطاری کے وقت دعا:

آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے افطار کرتے وقت ایک خاص دعا کی سفارش کی ہے: “پیاس چلی گئی، رگیں تر ہو گئیں، اور اگر اللہ نے چاہا تو ثواب ثابت ہو گیا۔” (ابو داؤد)

اعتدال میں کھانا:

نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے افطاری کے دوران زیادہ کھانے سے منع فرمایا۔ آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ابن آدم اپنے پیٹ سے بدتر کوئی برتن نہیں بھرتا، ابن آدم کے لیے یہ کافی ہے کہ وہ چند منہ کھا لے، اگر اسے ایسا کرنا ہی ہے تو ایک تہائی کھانے سے بھر لے۔ ایک تہائی پینے کے ساتھ، اور ایک تہائی ہوا کے ساتھ۔” (سنن الترمذی)

افطاری میں دعائیں پڑھنا:

افطار کا وقت ایک ایسا لمحہ سمجھا جاتا ہے جب دعائیں آسانی سے قبول ہوتی ہیں۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: روزہ دار کی ایک دعا ہے جو افطار کرتے وقت رد نہیں ہوتی۔ (ابن ماجہ)

سخاوت اور خیرات:

رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے رمضان  المبا رک کے مہینے میں سخا وت سے کا م کیا اور دو سروں کو بھی یہ ہی حکم دیا کہ با بر کت مہینے میں اپنا رزق دوسروں کے سا تھ با نٹیں ۔

سحری اور افطاری میں ان طریقوں کی پیروی نہ صرف سنت کے مطابق ہوتی ہے بلکہ مسلمانوں کو رمضان کے مہینے میں روزے کے روحانی فوائد کو زیادہ سے زیادہ حاصل کرنے کی بھی اجازت دیتا ہے۔