You are currently viewing احسان کر کے یاد دہا نی کروانا اللہ کو نا پسند ہے
Ehsaan Kar Kay yaad dihani krwana Allah ko na Pasand hai

احسان کر کے یاد دہا نی کروانا اللہ کو نا پسند ہے

  • Post author:
  • Post category:Ahadees

صحیح بخاری اور صحیح مسلم میں احسن کرنا اور اسکا جتانا (ایک احسان کرنا اور پھر دوسرے کو یاد دلانا) کے بارے میں حدیث موجود ہے۔ حدیث میں ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا:

“جس شخص نے کسی پر احسان کیا اور پھر اسے یاد دلایا تو اس کا احسان پورا نہیں ہوا۔”(صحیح بخاری، 2589)
حدیث ہمیں سکھاتی ہے کہ کسی کے احسان کی یاد دلانا جائز نہیں ہے جو ہم نے ان پر کیا ہے۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ یہ دوسرے شخص کو ہمارا مقروض محسوس کر سکتا ہے، اور یہ اس انعام سے بھی چھین سکتا ہے جو ہمیں پہلے احسان کرنے پر ملے گا۔
نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے یہ بھی فرمایا:”لوگوں میں سب سے بہتر وہ ہے جو دوسروں کے ساتھ بھلائی کرے اور پھر انہیں اس کی یاد دلائے”(صحیح مسلم، 2588)یہ حدیث دوسروں کو ان احسانات کی یاد دلانے کی اہمیت پر مزید زور دیتی ہے جو ہم نے ان کے لیے کیے ہیں۔ یہ ہمیں سکھاتا ہے کہ بہترین قسم کا انسان وہ ہے جو بدلے میں کسی چیز کی توقع کیے بغیر دوسروں کے ساتھ بھلائی کرتا ہے۔اس کی چند وجوہات ہیں کہ دوسروں کو ان احسانات کی یاد دلانا جائز نہیں ہے جو ہم نے ان پر کیے ہیں۔ سب سے پہلے، یہ دوسرے شخص کو ہمارا مقروض محسوس کر سکتا ہے، جس سے ذمہ داری اور دباؤ کا احساس پیدا ہو سکتا ہے۔ یہ دونوں فریقوں کے لیے غیر آرام دہ ہو سکتا ہے۔دوسرا، کسی کے احسان کی یاد دلانا اس انعام سے چھین سکتا ہے جو ہمیں پہلے احسان کرنے پر ملے گا۔ جب ہم کسی کے لیے کوئی احسان کرتے ہیں، تو ہمیں اس کی مدد کرنے کی مخلصانہ خواہش سے کرنا چاہیے، نہ کہ انعام پانے کی خواہش سے۔ اگر ہم دوسرے شخص کو احسان کی یاد دلاتے ہیں، تو ایسا لگتا ہے کہ ہم صرف ثواب کے لیے کر رہے ہیں۔آخر میں، کسی کا احسان یاد دلانا دو لوگوں کے درمیان تعلقات کو خراب کر سکتا ہے۔ یہ ناراضگی یا تلخی کا احساس پیدا کر سکتا ہے، جو مستقبل میں دو لوگوں کے لیے ایک دوسرے کے ساتھ بات چیت کرنا مشکل بنا سکتا ہے۔ان تمام وجوہات کی بنا پر، یہ ضروری ہے کہ دوسروں کو ان احسانات کی یاد دلانے سے گریز کیا جائے جو ہم نے ان کے لیے کیے ہیں۔ اگر ہم کسی کے لیے کوئی اچھا کام کرتے ہیں تو ہمیں اس کی مدد کرنے کی مخلصانہ خواہش کے تحت کرنا چاہیے اور اس کے بدلے میں کسی چیز کی امید نہیں رکھنی چاہیے۔ یہ یقینی بنانے کا بہترین طریقہ ہے کہ ہمارے اچھے کاموں کا اجر ملے، اور دوسروں کے ساتھ ہمارے تعلقات مضبوط ہوں۔