مہمانوں کی عظمت

مہمان کے اکرام کے بارے میں صحیح احادیث موجود ہیں:
● قال رسول الله صلى الله عليه وسلم: “من كان يؤمن بالله واليوم الآخر فليكرم ضيفه”. (متفق عليه).
□ جو شخص اللہ پر اور آخرت پر یقین رکھتا ہے وہ اپنے مہمان کا اکرام کرے.
● وقال صلى الله عليه وسلم: “ما في الناس مثل رجل آخذ برأس فرسه يجاهد في سبيل الله عز وجل، ويجتنب شرور الناس، ومثل آخر باد في نعمة يقري ضيفه ويعطي حقه”.(صحيح، رواه أحمد).
□ حضور علیہ السلام نے فرمایا کہ ان دو آدمیوں جیسا اجر والا کوئی نہیں: ایک وہ جو اللہ کے راستے میں جہاد کر رہا ہو اور دوسرا وہ جو مہمان نوازی کر رہا ہو.
● وقال صلى الله عليه وسلم: “إن لزورك عليك حقا”. (متفق عليه).
□ حضور علیہ السلام نے فرمایا کہ “تیرے مہمان کا تجھ پر حق ہے”.
اﯾﮏ ﻋﻮﺭﺕ ﺭﺳﻮﻝ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺁﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﭘﻨﮯ ﺷﻮﮨﺮ ﮐﯽ ﺷﮑﺎﯾﺖ ﮐﯽ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺑﮩﺖ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺍﭘﻨﮯ ﺩﻭﺳﺘﻮﮞ ﮐﻮ ﮔﮭﺮ ﺩﻋﻮﺕ ﺩﯾﺘﺎ ﺭﮨﺘﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﺗﮭﮏ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ ﮐﮭﺎﻧﮯ ﺑﻨﺎ ﺑﻨﺎ ﮐﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻣﮩﻤﺎﻧﺪﺍﺭﯼ ﻣﯿﮟ ۔ﺭﺳﻮﻝ ﷺ ﻧﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﺟﻮﺍﺏ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﻋﻮﺭﺕ ﻭﺍﭘﺲ ﭼﻠﯽ ﮔﺌﯽ ۔ﮐﭽﮫ ﺩﯾﺮ ﺑﻌﺪ ﺭﺳﻮﻝ ﷺ ﻧﮯ ﺍﺱ ﻋﻮﺭﺕ ﮐﮯ ﺷﻮﮨﺮ ﮐﻮ ﺑﻠﻮﺍﯾﺎ ﺍﻭﺭ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ، ” ﺁﺝ ﻣﯿﮟ ﺗﻤﮩﺎﺭﺍ ﻣﮩﻤﺎﻥ ﮨﻮﮞ ۔ ” ﻭﮦ ﺁﺩﻣﯽ
ﺑﮩﺖ ﺧﻮﺵ ﮨﻮﺍ ﺍﻭﺭ ﮔﮭﺮ ﺟﺎ ﮐﮯ ﺍﭘﻨﯽ ﺑﯿﻮﯼ ﮐﻮ ﺑﺘﺎﯾﺎ ﮐﮧ ﺭﺳﻮﻝ ﺍﻟﻠﻪ ﷺ ﺁﺝ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﻣﮩﻤﺎﻥ ﮨﯿﮟ ” ﺍﺱ ﮐﯽ ﺑﯿﻮﯼ ﺑﯿﺤﺪ ﺧﻮﺵ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ ﺍﻭﺭ ﻭﻗﺖ ﻟﮕﺎ ﮐﺮ ﻣﺤﻨﺖ ﺳﮯ ﮨﺮ ﺍﭼﮭﯽ ﭼﯿﺰ ﺗﯿﺎﺭ ﮐﺮﻧﮯ ﺟﻮﭦ ﮔﺌﯽ ﺍﭘﻨﮯ ﺳﺐ ﺳﮯ ﻣﻌﺰﺯ ﻣﮩﻤﺎﻥ ﺭﺳﻮﻝ ﷺ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ۔ ﺍﺱ ﺯﺑﺮﺩﺳﺖ ﭘﺮ ﺗﮑﻠﻒ ﺩﻋﻮﺕ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺭﺳﻮﻝ ﷺ ﻧﮯ ﺍﺱ ﺷﺨﺺ ﺳﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ‘ ﺍﭘﻨﯽ ﺑﯿﻮﯼ ﺳﮯ ﮐﮩﻨﺎ ﮐﮧ ﺍﺱ ﺩﺭﻭﺍﺯﮮ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮭﺘﯽ ﺭﮨﮯ ﺟﺲ ﺳﮯ ﻣﯿﮟ ﺟﺎﻭﮞ ﮔﺎ ‘ ۔ ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺑﯿﻮﯼ ﻧﮯ ﺍﯾﺴﺎ ﮨﯽ ﮐﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺩﯾﮑﮭﺘﯽ ﺭﮨﯽ ﮐﮧ ﮐﺲ ﻃﺮﺡ ﺭﺳﻮﻝ ﷺ ﮐﮯ ﮔﮭﺮ ﺳﮯ ﻧﮑﻠﺘﮯ ﮨﯽ ﺁﭖ ﮐﮯ ﭘﯿﭽﮭﮯ ﺑﮩﺖ ﺳﮯ ﺣﺸﺮﺍﺕ ، ﺑﭽﮭﻮ ﺍﻭﺭ ﺑﮩﺖ ﺳﮯ ﻣﮩﻠﮏ ﺣﺸﺮﺍﺕ ﺑﮭﯽ ﮔﮭﺮ ﺳﮯ ﺑﺎﮨﺮ ﻧﮑﻞ ﮔﺌﮯ ۔ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﻋﺠﯿﺐ ﻭ ﻏﺮﯾﺐ ﻣﻨﻈﺮ ﺩﯾﮑﮫ ﮐﺮ ﻭﮦ ﺑﮯ ﮨﻮﺵ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ ۔ﺟﺐ ﻭﮦ ﺭﺳﻮﻝ ﷺ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺁﺋﯽ ﺗﻮ ﺁﭖ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ﮐﮧ ” ﯾﮧ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺟﺐ ﺗﻤﮩﺎﺭﮮ ﮔﮭﺮ ﺳﮯ ﻣﮩﻤﺎﻥ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ، ﺗﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﮨﺮ ﻃﺮﺡ ﮐﮯ ﺧﻄﺮﺍﺕ ، ﻣﺸﮑﻼﺕ ﺍﻭﺭ ﺁﺯﻣﺎﺋﺸﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﻣﮩﻠﮏ ﺟﺎﻧﺪﺍﺭ ﮔﮭﺮ ﺳﮯ ﺑﺎﮨﺮ ﻟﮯ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ، ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﺍﺳﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ
ﮐﮧ ﺟﻮ ﺗﻢ ﻣﺤﻨﺖ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺧﺪﻣﺖ ﻣﺪﺍﺭﺕ ﮐﺮﺗﯽ ﮨﻮ ۔ “ﺟﺲ ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﻣﮩﻤﺎﻥ ﺁﺗﮯ ﺟﺎﺗﮯ ﺭﮨﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻟﻠﻪ ﺍﺱ ﮔﮭﺮ ﺳﮯ ﻣﺤﺒﺖ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ ۔ ﺍﺱ ﮔﮭﺮ ﺳﮯ ﺑﮩﺘﺮ ﺍﻭﺭ ﮐﯿﺎ ﮨﻮ ﮐﮯ ﺟﻮ ﮨﺮ ﭼﮭﻮﭨﮯ ﺑﮍﮮ ﮐﮯ ﻟﮯ ﮐﮭﻼ ﺭﮨﮯ۔ ﺍﯾﺴﮯ ﮔﮭﺮ ﭘﺮ ﺍﻟﻠﻪ ﮐﯽ ﺭﺣﻤﺖ ﺍﻭﺭ ﺑﺨﺸﯿﺶ ﻧﺎﺯﻝ ﮨﻮﺗﯽ ﺭﮨﺘﯽ ﮨﯿﮟ ۔ﺭﺳﻮﻝ ﷺ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ، ” ﺟﺐ ﺍﻟﻠﻪ ﮐﺴﯽ ﮐﺎ ﺑﮭﻼ ﭼﺎﮨﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺗﻮ ، ﺍﺳﮯ ﻧﻮﺍﺯﺗﮯ ﮨﯿﮟ , ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﭘﻮﭼﮭﺎ ، ” ﮐﺲ ﺍﻧﻌﺎﻡ ﺳﮯ ؟ ﺍﮮ ﺍﻟﻠﻪ ﮐﮯ ﺭﺳﻮﻝ ﷺ ؟ ” ﺁﭖ ﻧﮯ ﻓﺮﻣﺎﯾﺎ ، ” ﻣﮩﻤﺎﻥ ﺍﭘﻨﺎ ﻧﺼﯿﺐ ﻟﮯ ﮐﺮ ﺁﺗﺎ ﮨﮯ ، ﺍﻭﺭ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﮔﮭﺮ ﻭﺍﻟﻮﮞ ﮐﮯ ﮔﻨﺎﮦ ﺍﭘﻨﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﻟﮯ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ۔ “ﻣﯿﺮﮮ ﻋﺰﯾﺰﻭ ! ﺟﺎﻥ ﻟﻮ ﮐﮧ ﻣﮩﻤﺎﻥ ﺟﻨﺖ ﮐﺎ ﺭﺍﺳﺘﮧ ﮨﮯ ۔ ﺭﺳﻮﻝ ﷺ ﮐﺎ ﺍﺭﺷﺎﺩ ﮨﮯ ﮐﮧ ، ” ﺟﻮ ﺍﻟﻠﮧ ﺍﻭﺭ ﺭﻭﺯ ﺁﺧﺮ ﭘﺮ ﺍﯾﻤﺎﻥ ﺭﮐﮭﺘﺎ ﮨﮯ ﻭﮦ ﺍﭘﻨﮯ ﻣﮩﻤﺎﻥ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺑﮯ ﻟﻮﺙ ﮨﻮ
نوٹ اس واقعہ کی موثر تصدیق ممکن نہیں ہو سکی،یہ قصہ فرضی بھی ہو سکتا ہے

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں