ماه رمضان ميں صدقہ كرنا

صدقہ وخيرات گناہوں اور غلطيوں كواس طرح مٹا ديتا ہےجس طرح پاني آگ كوختم كرديتا ہے، اور پھر صدقہ اللہ تعالي كےغضب كوبھي ٹھنڈا كرديتا ہے، اوراسي طرح صدقہ ايسي نيكي ہےجو روزقيامت صدقہ كرنےوالے پر سايہ كرےگا…
اس كےعلاوہ بھي صدقہ وخيرات كےبہت سےفضائل ہيں جوصدقہ كرنے والے كوحاصل ہوتےہيں، اس ميں كوئي شك نہيں كہ رمضان المبارك كا مہينہ جود وسخا اورصدقہ كرنےكا مہينہ ہے، اس ليےہم تين اعتبار سے اس موضوع كو سميٹنےكي كوشش كرتےہيں
اول: رمضان المبارك ميں جودوسخا
دوم: جود وسخا كےدس مرتبے
سوم رمضان المبارك تك زكاۃ كي ادائيگي ميں تاخير كرنا
ماہ رمضان خيروبركت اوراطاعت كا مہينہ ہے، نبي كريم صلي اللہ عليہ وسلم سب لوگوں سےزيادہ بہتر اخلاق حسنہ كےمالك اور ان ميں سب سے زايادہ اطاعت وفرمانبرداري كرنےوالےتھےليكن اس كےباوجود رمضان المبارك ميں باقي ايام سےزيادہ اطاعت وفرمانبرداري اور سخاوت كرتے.
ابن قيم رحمہ اللہ تعالي كہتےہيں
نبي كريم صلي اللہ عليہ وسلم سب لوگوں سےزيادہ سخي تھے اور رمضان المبارك ميں اس سےبھي زيادہ سخاوت كرتے، اس ميں صدقہ واحسان اور قرآن مجيد كي تلاوت اور نماز، اللہ تعالي كا ذكر اور اعتكاف كثرت سےكرتے تھے. ديكھيں: زاد المعاد ( 2 / 32 )
اور صحابہ كرام كي نظريں جس پر كثرت سےپڑيں وہ نبي كريم صلي اللہ عليہ وسلم كي رمضان المبارك ميں جود وسخا تھي ، سخاوت يہ ہےكہ كسي ضرورت مند كو وہ چيز دي جائے جواسے ضرورت ہو، يہ اس فضول خرچي كي طرح نہيں جوحد سےتجاوز ہوتي ہے، اوربعض اوقات اپني جگہ پر بھي نہيں ہوتي ابن قيم رحمہ اللہ تعالي كہتےہيں:
جود وسخا اور فضول خرچي ميں فرق يہ ہےكہ: سخي حكمت والا ہوتا ہے وہ اپني سخاوت اس كي جگہ پر ركھتا ہے( يعني سخاوت وہاں كرتا ہےجہاں ضرورت ہو) اور فضول خرچ كرنےوالا اسراف كرتا ہےبعض اوقات اس كي دي ہوئي چيز موقع پر ہوتي ہے ليكن اكثر اوقات وہ اپني جگہ پر نہيں ہوتي .
ديكھيں: الروح ( 235 ) .
انس رضي اللہ تعالي عنہ بيان كرتےہيں كہ رسول كريم صلي اللہ عليہ وسلم سب لوگوں سےخوبصورت اور سب لوگوں سےزيادہ جود وسخا كےمالك اورسب لوگوں سےبہادر تھے. صحيح بخاري ( 5686 ) صحيح مسلم ( 2307 )
ابن عباس رضي اللہ تعالي عنہ بيان كرتےہيں كہ رسول كريم صلي اللہ عليہ وسلم سب لوگوں سےزيادہ سخي تھے، اور رمضان المبارك ميں جب جبريل امين عليہ السلام آپ سےملتےتواس وقت اور بھي زيادہ سخي ہوتے، اور جبريل عليہ السلام رمضان المبارك كي ہر رات نبي كريم صلي اللہ عليہ وسلم سےملكر قرآن مجيد كا دور كيا كرتےتھے، تورسول كريم صلي اللہ عليہ وسلم بھلائي اور خير ميں تند وتيز ہوا سےبھي زيادہ سخي تھے. صحيح بخاري حديث نمبر ( 6 ) صحيح مسلم حديث نمبر ( 2308 )

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں